65 Views

کرونا وائرس کی علامات احتیاطی تدابیر اور علاج-Coronavirus Symptoms Precautions And Treatments

Coronavirus Symptoms Precautions and Treatments

کرونا وائرس کا تعارف

Here in this article we will share some knowledge about Coronavirus Symptoms Precautions and Treatments.

اس پوسٹ کے اندر کرونا وائرس کی علامات احتیاطی تدابیر اور علاج کو آپ کے ساتھ  شیئر کریں گے۔

جیسا کہ تمام احباب کو معلوم ہے کہ دنیا بھر میں ایک وائرس بہت زیادہ تیزی سے پھیل رہا ہے جس کا نام کرونا وائرس ہے۔کرونا وائرس ایک ایسا خطرناک وائرس ہے جس کی علامات کئی دن تک ظاہر نہیں ہوتی. اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے اگر کسی شخص کو یہ وائرس ہو جائے تو اسے کیسے پتہ چلے گا کہ اسے کرونا وائرس ھوچکا ھے بدقسمتی سے جسے یہ وائرس ہو چکا ہوتا ہے ڈاکٹر تک پہنچنے تک اس کے 50فیصد پھیپھڑے ختم ہوچکے ہوتے ہیں.

کرونا وائرس کی علامات

  1. کورونا وائرس سے متاثرہ افراد میں سر درد کا ہونا
  2. نزلہ اور کھانسی کا ہونا
  3. تھکن جیسی علامات سامنے آ سکتی ہیں۔

کرونا وائرس کی احتیاطی تدابیر

  1. گلے کو خشک نہ رکھیں۔
  2. تھوڑا تھوڑا پانی پیتے رہیں-
  3. بڑے 50 سینٹی گریڈ تک پانی پیئں۔
  4. چھوٹے 30 سینٹی گریڈ تک پانی پیئں۔
  5. مارچ تک ایسے ہی گرم پانی پیتے رہیں-
  6. پرہجوم جگہوں پر جانے سے پرہیز کریں-
  7. گھر سے باہر جاتے وقت ماسک ضرور پہنیں۔
  8. مصالحہ دار اور فرائی فوڈ سے گریز کریں۔
  9. باہر سے آتے وقت لازمی ہاتھ دھوئیں-
  10. سبزیاں اور پھل زیادہ استعمال کریں-
  11. ہاتھ ملانے اور گلے ملنے سے گریز کریں۔
  12. گوشت سے پرہیز کریں-

کرونا وائرس کا علاج

بد قسمتی سے کرونا وائرس کا ابھی تک کوئی علاج دریافت نہیں ہوا۔ صرف احتیاطی تدابیر اختیار کر کے اس بیماری سے بچا جا سکتا ہے-

تائیوان کے ڈاکٹرز نے ایک آسان ٹیسٹ متعارف کروایا جو آپ خود بھی کر سکتے ہیں. صبح اٹھ کر لمبا سانس لے کر اندر کو روکے اور دس سیکنڈ تک سانس کو روک کر رکھیں. اس دوران اگر آپ کو کھانسی نہیں ہوتی یا آپ کا دم نہیں گھٹتا تو اس کا مطلب ہے کہ آپ کو کرونا وائرس نہیں ہے اس نازک دور میں ہر کسی سے گزارش ہے کہ دن میں ایک دو مرتبہ اپنا یہ ٹیسٹ ضرور کریں اور دوسروں کو بھی بتائے. اپنے گلے اور منہ کو ہرگز خشک نہ ہونے دے ہر پندرہ منٹ کے بعد کوئی Liquid ہر حال میں منہ میں جانا چاہیے. اس طرح کرنے سے کوئی بھی وائرس آپ کے منہ یا گلے میں نہیں رک سکے گا بلکہ معدے میں ٹرانسفر ہوکر ڈائجسٹ ہوجائے گا اگر ایسا نا کیا تو یہ وائرس سانس کی نالیوں کے ذریعے پھیپڑوں میں داخل ہوجائے گا-

ضروری درخواست

برائے مہربانی اس آرٹیکل کو اپنے زیادہ سے زیادہ دوستوں ، عزیزواقارب کو شیئر کریں کیونکہ “اللہ تعالی کا ارشاد ہے جس نے ایک انسان کی جان بچائی گویا اس نے تمام انسانیت کی جان بچائی”-

مزید اچھے آرٹیکلز کیلیے سٹڈی سلیوشن کو وزٹ کریں- اور ہمارا فیس بک پیج لازمی لایئک کریں-

 

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Scroll to Top